36

بوسنیا کی ’سرخ خاتون‘ نے اپنی قبر کا کتبہ بھی لال رنگ سے بنوالیا

بوسنیا کے ایک گاؤں میں رہائش پذیر خاتون زوریکا ریبرنک ایک عرصے سے سر سے پیر تک سرخ لباس میں ملبوس رہتی ہیں۔ اس کے علاوہ ان کے گھر کی ہر شے سرخ رنگت کی ہے۔ وہ زندگی بھر سرخ رنگت میں رہنا چاہتی ہیں، یہاں تک کہ انہوں نے اپنی قبر کتبہ بھی سرخ بنوایا ہے اور اس پر اپنی تصویر بھی لگائی ہے۔

67 سالہ زوریکا گزشتہ 40 برس سے سرخ لباس پہن رہی ہیں اور ان کے گھریلو استعمال کی تقریباً تمام اشیا ہی لال رنگ کی ہیں۔ انہوں نے ہندوستان سے سرخ گرینائٹ منگوایا ہے اور اس پر اپنا اور شوہر کی قبر کا کتبہ کندہ کرایا ہے۔

بھارت میں طاقتور اژدھے سے ایک شخص کی گردن چھڑانے کی ویڈیو وائرل

ہر دم سرخ لباس پہنے زوریکا اب پورے بوسنیا میں مشہور ہیں۔ وہ پانی بھی سرخ گلاس میں پیتی ہیں اور اپنے بال بھی سرخ رنگ میں رنگوائے ہیں۔ لیکن انہیں سرخ رنگت اختیار کرنے کا اچانک خیال اس وقت آیا جب وہ 18 برس کی تھیں۔

’جب میں اٹھارہ سال کی ہوئی تو میرے اندر سرخ رنگ پہننے کی زبردست خواہش پیدا ہوئی اور اب یہ حال ہے کہ میرے گھر کی روشنیاں بھی سرخ ہیں اور گھر کے تمام پردے اور کپڑے بھی سرخ ہیں،‘ انہوں نے کہا۔

وہ کہتی ہیں کہ لال رنگ پہننے سے انہیں قوت ملتی ہے اور اسی وجہ سے ان کی صحت بھی بہت اچھی ہے۔ یہاں تک کہ اگر انہیں کوئی تحفہ سرخ رنگ سے ہٹ کر دیا جائے تو اسے مسترد کردیتی ہیں۔ اور تو اور، وہ جنازوں میں بھی سرخ لباس پہن کر ہی جاتی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں